پاکستانفیچرڈ پوسٹ

قومی خزانہ میں زرمبادلہ کے ذخائر کتنے ہیں؟ عالمی ریٹنگ ایجنسی نے اہم خبر کی سچائی بتا کر قومی سیاستدانوں سمیت ملک بھرکے لوگوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی

پاکستان میں سیاسی ہلچل غیر یقینی کی صورتحال پیدا کر رہی ہے،سیاسی عدم استحکام اس وقت پیدا ہے جب ملک کو مہنگائی نے لپیٹ میں لیا ہوا ہے

قومی خزانہ میں زرمبادلہ کے ذخائر کتنے ہیں؟ عالمی ریٹنگ ایجنسی نے اہم خبر کی سچائی بتا کر قومی سیاستدانوں سمیت ملک بھرکے لوگوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق عالی ریٹنگ ایجنسی موڈیز نے پاکستان کے زر مبادلہ ذخائر کو دو ماہ کی درآمدات کی ادائیگی کے لیے کافی قرار دے دیا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق موڈیز کا کہنا ہے کہ پاکستان میں سیاسی ہلچل غیر یقینی کی صورتحال پیدا کر رہی ہے،سیاسی عدم استحکام اس وقت پیدا ہے جب ملک کو مہنگائی نے لپیٹ میں لیا ہوا ہے۔ زرمبادلہ ذخائر گر رہے ہیں اور جاری کھاتوں کا خسارہ بڑھ رہا ہے۔موڈیز نے واضح نہیں کیا کہ نئی حکومت آئی ایم ایف پروگرام سے کیسے رجوع کرے گی، پاکستان کو زرمبادلہ ذخائر بڑھانے کے لیے آئی ایم ایف کی معاونت درکار ہے اور پاکستان کے زرمبادلہ ذخائر صرف دو ماہ کی درآمدات کو پورا کرنے کے لیے رہ گئے ہیں۔ایک رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ بین الاقوامی ریٹنگ ایجنسی موڈیز نے پاکستانی بینکوں کا آئوٹ لک مستحکم قرار دے دیا۔

موڈیز کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ مستحکم آئوٹ لک سے معیشت کا بہتر تسلسل اور بڑھتی مالی شمولیت ہے، بہتر معاشی سرگرمیوں کے سبب بینکوں کی قرض گیری بڑھے گی۔ عالمی ادارے کا یہ بھی کہنا ہے کہ مالی سال 2022 میں جی ڈی پی کی شرح نمو 3 سے 4 فیصد رہنے کا اندازہ ہے، جبکہ مالی سال 2023 میں جی ڈی پی کی شرح نمو 4 سے 5 فیصد ہوسکتی ہے۔ ریٹنگ ایجنسی کا کہنا تھا کہ کورونا وبا کو پاکستانی بینکوں نے کامیابی سے گزارا ہے، غیرفعال قرضوں کی شرح بلند مگر مجموعی قرضوں کے 9 فیصد پر مستحکم رہے گی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.