پاکستانفیچرڈ پوسٹ

آئی ایم ایف نے پاکستان کیلئے کتنے بلین ڈالر کے بیل آؤٹ پیکیج کے بحالی کی منظوری دی؟ کون کون سی شرائط رکھیں؟ تمام تفصیلات منظر عام پر آگئیں

قرض لینے کے لیے ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کو ختم، بجلی کے نرخوں میں اضافہ، نئے ٹیکسوں کا نفاذ اور مالیاتی بچت کو یقینی بنانا ہو گا

آئی ایم ایف نے پاکستان کیلئے کتنے بلین ڈالر کے بیل آؤٹ پیکیج کے بحالی کی منظوری دی؟ کون کون سی شرائط رکھیں؟ تمام تفصیلات منظر عام پر آگئیں۔

تفصیلات کے مطابق عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف)نے پاکستان کیلئے چھ بلین ڈالر کے بیل آٹ پیکج کی بحالی کے لیے پانچ شرائط رکھ دیں۔عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف)نے اپنی پانچ شرائط پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ قرض لینے کے لیے ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کو ختم، بجلی کے نرخوں میں اضافہ، نئے ٹیکسوں کا نفاذ اور مالیاتی بچت کو یقینی بنانا ہو گاجبکہ ایندھن کی سبسڈی کو واپس لینا ہوگا۔ نئے وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے آئی ایم ایف پروگرام کی بحالی کے لیے اس کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا سے روبرو ملاقات کی درخواست بھی کی ہے۔ یاد رہے پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان مذاکرات کا آغاز ہو گیا ہے، پاکستان اور آئی ایم ایف میں مذاکرات 24 اپریل تک جاری رہیں گے۔

آئی ایم ایف کے ساتھ کامیاب مذاکرات کی صورت میں پاکستان کو 1 ارب ڈالر کی قسط جاری ہوگی۔ مذاکرات میں آئندہ بجٹ سے متعلق بھی تجاویز زیر غور آئیں گی، ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کی جانب سے بڑا ٹیکس ہدف مقرر کیے جانے کا مطالبہ ہوگا، امکان ہے کہ آئی ایم ایف 7 ہزار ارب ٹیکس ہدف کا مطالبہ کرے گا۔جب کہ وفاقی وزیرخزانہ ومحصولات مفتاح اسماعیل نے کہاہے کہ آئی ایم ایف کے پروگرام کوٹریک پرواپس لانے کیلئے وہ واشنگٹن روانہ ہورہے ہیں، پی ٹی آئی حکومت گیس کے شعبہ میں 1500 ارب روپے کاگردشی قرضہ چھوڑگئی ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.