پاکستانفیچرڈ پوسٹ

عمران خان سے اعجاز الحق کی ملاقات، کس کا پیغام پہنچایا گیا؟ کن معاملات پر اتفاق ہوا؟ تہلکہ مچا دینے والی خبر سامنے آنے پر قومی سیاست میں کھلبلی مچ گئی

ملاقات میں مقتدر حلقوں سے تعلقات بہتر بنانے پر اتفاق کیا گیا' ہمارے دور کا اس امپورٹڈ حکومت سے کوئی موازنہ نہیں کیا جا سکتا: عمران خان

عمران خان سے اعجاز الحق کی ملاقات، کس کا پیغام پہنچایا گیا؟ کن معاملات پر اتفاق ہوا؟ تہلکہ مچا دینے والی خبر سامنے آنے پر قومی سیاست میں کھلبلی مچ گئی ۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم عمران خان سے چیئرمین ضیاء لیگ اعجاز الحق کی بنی گالا میں ملاقات ہوئی ہے۔ اعجاز الحق کی جانب سے عمران خان کو اہم پیغام پہنچایا گیا ہے۔ملاقات میں مقتدر حلقوں سے تعلقات بہتر بنانے پر اتفاق کیا گیا۔عمران خان نے کہا کہ ہمارے دور کا اس امپورٹڈ حکومت سے کوئی موازنہ نہیں کیا جا سکتا۔ بجلی ، گیس ، پٹرول ہر چیز کنٹرول سے باہر ہو گئی ہے۔موجودہ بگڑتی معاشی صورتحال کا واحد حل شفاف انتخابات ہیں۔عمران خان نے کہا جلد از جلد شفاف انتخابات کروائے بغیر حالات ٹھیک نہیں ہو سکتے۔ہر چیز عام آدمی کی پہنچ سے باہر ہو رہی ہیں۔ اس موقع پر عمران خان نے کہا کہ افواج پاکستان کی ملک کے لیے بڑی قربانیاں ہیں،دل سے ان کی عزت کرتا ہوں۔ملک کے لیے افواج پاکستان کی قربانیوں کو کبھی بھلایا نہیں جا سکتا۔

رپورٹ کے مطابق ملاقات کے بعد اعجاز الحق بھی پرامید ہیں اور انہوں نے کہا ہے کہ عمران خان کے رویے میں میں تھوڑی لچک آئی ہے۔آنے والے حالات میں بہتری دکھائی دے گی، تنا میں بھی کمی آئے گی۔اس سے قبل مسلم لیگ ضیا کے سربراہ اعجازالحق نے کہا تھا کہ نہ عمران خان کا نمبر بلاک ہوا ہے نہ فیضیاب کرنے والوں کا ، دونوں نمبر کھلے ہیں،اسٹیبلشمنٹ کو غصہ ہے کہ ہمارے خلاف بہت سخت زبان استعمال کی گئی،عمران خان میں لچک آچکی ہے اور اب دوسروں میں بھی آنی چاہیے،جنرل ضیا الحق کے زمانے میں پیپلز پارٹی کے ساتھ رابطہ تھا۔

مسلم لیگ ضیا کے سربراہ اعجاز الحق نے ایک انٹرویو میں کہا کہ اسٹیبلشمنٹ کو غصہ ہے کہ ہمارے خلاف بہت سخت زبان استعمال کی گئی ہے، نہ عمران خان کا نمبر بلاک ہوا ہے نہ فیضیاب کرنے والوں کا، بلکہ دونوں نمبر کھلے ہیںانھوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن)کیلئے بھی سیاسی راستے بند کرنے کوشش کی گئی لیکن وہ بھی حکومت میں آگئے۔انھوں نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ میں کبھی ایسا نہیں ہوتا کہ کسی سے دشمنی کی جائے جب کہ عمران خان اور اسٹیبلشمنٹ میں رابطے ہو رہے ہیں۔انھوں نے کہا کہ تحریک انصاف کے لانگ مارچ کے دوران سپریم کورٹ جانے سے تحریک انصاف کی سیاست کمزور ہوئی۔اعجازالحق نے انکشاف کیا کہ جنرل ضیا الحق کے زمانے میں پاکستان پیپلز پارٹی کے ساتھ رابطہ تھا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.