پاکستان

سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے کے بعد پرویز الٰہی کے وکیل علی ظفر کا ردعمل بھی سامنے آگیا

پروسیجر ریگولیٹ کرسکتے ہیں لیکن اس سے عدلیہ کی آزادی متاثر نہ ہو، قانون صرف پروسیجر کی حد تک بن سکتا ہے: علی ظفر

وزیراعلی پنجاب کے انتخاب کیخلاف سپریم کورٹ میں دائر پرویز الٰہی کی درخواست پر فیصلہ آچکا ہے جس کے بعد پرویز الٰہی کے وکیل علی ظفر کا ردعمل بھی سامنے آگیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پرویز الٰہی کے وکیل علی ظفر نے بتایا کہ عدالت نے کہا کہ فل کورٹ ستمبر سے پہلے نہیں بن سکتا اور صوبے کو ایسے نہیں چھوڑ جاسکتا، ماضی تین یا چار کیسز میں فل کورٹ بیٹھا ہے وہ تمام آئینی ترامیم کے بڑے کیسز تھے، دوسرا کیس این آراو کا تھا جس میں چیف جسٹس نے سوچا کے فل کورٹ بنالیتے ہیں، جہاں معاملہ بہت پچیدہ ہو وہاں فل کورٹ بنایا جاتا ہے۔ علی ظفر ایڈووکیٹ نے مزید کہا کہ آئین میں گنجائش ہے کہ قانون کے ذریعے عدالتی کارروائی کے پروسیجر ریگولیٹ کرسکتے ہیں، پروسیجر ریگولیٹ کرسکتے ہیں لیکن اس سے عدلیہ کی آزادی متاثر نہ ہو، قانون صرف پروسیجر کی حد تک بن سکتا ہے۔ علی ظفر ایڈووکیٹ نے کہا کہ مجھے سمجھ نہیں آتی فرحت اللہ بابر کس قسم کی قانون سازی کرنا چاہتے ہیں؟

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.