پاکستانفیچرڈ پوسٹ

رانا شمیم کیخلاف توہین عدالت کیس، جو بھی ریڈ لائن کراس کرے گا اس کے خلاف کیا کارروائی کی جائے گی؟ چیف جسٹس اطہر امن اللہ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی

عدالت سے عوام کا اعتماد اٹھانے کی کوشش کی گئی،عدالت کسی بھی حد تک جائیگی'ریڈ لائن کراس کرنے پر توہین عدالت کی کارروائی ہو گی

رانا شمیم کیخلاف توہین عدالت کیس، جو بھی ریڈ لائن کراس کرے گا اس کے خلاف کیا کارروائی کی جائے گی؟ چیف جسٹس اطہر امن اللہ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی ۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی اورچیف جسٹس اطہر من اللہ نے کیس پر سماعت کی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ توہین عدالت کون کرتا ہے یہ بات بڑی اہم ہوتی ہے۔ سابق چیف جج نے ایک انگریز سولیسٹر سے بیان حلفی لکھوایا،یہ بیان حلفی بہت اہمیت رکھتا ہے،اگر بیان حلفی سچا ہے تو رانا شمیم اسے ثابت کریں اگر سچا نہیں ہے تو یہ بہت سنجیدہ معاملہ ہے،رانا شمیم اپنا بیان حلفی ثابت کریں ورنہ غیرمشروط معافی مانگیں۔ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے قرار دیا کہ اس عدالت نے توہین عدالت کیس کی کارروائی آگے بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے،اس عدالت کو غرض نہیں کہ بیان حلفی کس طرح لیک ہو گیا۔ یہ عدالت رانا شمیم کو شفاف ٹرائل کا مکمل موقع دے گی،رانا شمیم اگر بیان حلفی تسلیم کرتے ہیں تو انہیں ہچکچاہٹ کیا ہے؟ عدالت نے ریمارکس دئیے کہ اگر رانا شمیم نے بیان حلفی ثابت کر دیا تو عدالت توہین عدالت کی کارروائی ختم کر دے گی۔ دوران سماعت پراسیکیوشن نے صرف 4 گواہوں کی فہرست جمع کرائی جن میں ڈپٹی کمشنر،رجسٹرار،ایڈیشنل رجسٹراراوربرطانوی سولیسٹر شامل ہیں،سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کا نام شامل نہیں،اسلام آباد ہائیکورٹ نے رانا شمیم کو گواہوں کی فہرست جمع کرانے کا آخری موقع دے دیا،کیس کی مزید سماعت 12 ستمبرکو ہو گی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.