پاکستان

جمہوری نظام پرحملہ؟جسٹس فائزعیسیٰ میدان میں آگئے

سینئرجج نےکہا ہےکہ کہیں نہیں لکھا کہ ججزتعیناتی کا اختیارچیف جسٹس کو ہے

سپریم کورٹ کےسینئرجج جسٹس قاضی فائزعیسیٰ نے کہا ہے کہ کہیں نہیں لکھا کہ ججزتعیناتی کا اختیارچیف جسٹس کو ہے، آئین جوڈیشل کمیشن میں ہرممبرکوبرابرووٹ کا حق دیتا ہے۔

کراچی میں سندھ ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سالانہ عشائیے سے خطاب کرتے ہوئے سپریم کورٹ کے سینیئر جج جسٹس قاضی فائزعیسیٰ نے مزید کہا کہ پاکستان بنے7 سال ہی ہوئے تو اس کے جمہوری نظام پرحملہ کیا گیا، اُس وقت کی عدالت نے اس غیر جمہوری حملے کو غیرآئینی قرار دیا۔

انہوں نے کہا کہ آئین ساز اسمبلی برطرف کی گئی، اُس وقت جو غیرآئینی فیصلوں کی جڑ لگائی گئی اسکا ملک پرمنفی اثر پڑا، غیر قانونی فیصلے سے سابق وزیراعظم کو سزائے موت دی گئی۔

انہوں نے کہا کہ 2007 میں وکلا نے تحریک ججز کیلئے نہیں شہریوں کیلئے چلائی، 2007 میں قربانی کراچی کے شہریوں نے دی، مکا لہرانے والے نے کنٹینر کی سیاست شروع کی۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے وکلا کی بھی عدلیہ کیلئے بڑی قربانی ہے، کچھ لوگوں کی اقتدار کی ہوس کے باعث ملک کو نقصان ہوا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.