سوشل ایشوزفیچرڈ پوسٹ

نوجوان کو گردے نکال کر سڑک کنارے پھینک دینے کی تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد بڑے جھوٹ سے پردہ اٹھ گیا، اصل حقیقت سامنے آگئی

اصل میں نوجوان روڈ ایکسیڈنٹ کا شکار ہوا اور اس کے سر پر چوٹیں آئی اور اب وہ ہسپتال کے انتہائی نگہداشت وارڈ میں زیر علاج ہے

نوجوان کو گردے نکال کر سڑک کنارے پھینک دینے کی تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد بڑے جھوٹ سے پردہ اٹھ گیا، اصل حقیقت سامنے آگئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق سوشل میڈیا پر پچھلے تین دنوں سے ایک نوجوان کی تین تصاویر وائرل ہیں جس میں اسے ایک اسپتال کے بستر پر لیٹے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے جب کہ اس کے منہ کے ساتھ ایک پائپ بھی لگا ہوا ہے۔تصاویر میں بظاہر نوجوان کی حالت بہت زیادہ خراب لگ رہی ہے۔تاہم نوجوان کی تصاویر سے متعلق سوشل میڈیا پر کئے جانے والے دعوے خاصے حیران کن تھے۔

سوشل میڈیا پر شیئر ہونے والی تصویر کے نیچے صارفین نے لکھا کہ یہ نوجوان تین دن سے لاپتہ تھے اور کسی نے ان کے گردے نکالنے کے بعد اسپتال لا کر چھوڑ دیا اور اب وہ ہسپتال کے آئی سی یو میں زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ایک صاحب نے دعوی کیا کہ عبید کچھ دنوں سے لاپتہ تھا اور آج کسی نے گردے نکال کر سڑک کے کنارے پھینک دیا۔

یہ تصاویر سوشل میڈیا پر سامنے آئی تو صارفین تصدیق کرنے کی بجائے اسے مزید سنسنی پھیلانے کے لیے شیئر کرتے رہے۔ تاہم سوشل میڈیا پر بتائے جانے والے واقعہ کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔کراچی کے جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سینٹر کا شمار ملک کے بڑے ہسپتالوں میں ہوتا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق جب اسپتال کے ڈائریکٹر سیمی جمالی سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ یہ مکمل طور پر جھوٹ ہے کہ نوجوان کے گردے نکال دیے گئے ہیں اور کسی ویران جگہ پر چھوڑ دیا گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ نوجوان کے جسم پر گردے نکالے جانے کا کوئی نشان نہیں ہے۔ڈاکٹر سیمی جمالی کے مطابق اصل میں نوجوان روڈ ایکسیڈنٹ کا شکار ہوا اور اس کے سر پر چوٹیں آئی اور اب وہ ہسپتال کے انتہائی نگہداشت وارڈ میں زیر علاج ہے۔ڈاکٹر سیمی جمالی کے مطابق نوجوان بے ہوش ہے اور ڈاکٹر اس کی جان بچانے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن سر پر چوٹ لگنے کی وجہ سے حالت ٹھیک نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button