سوشل ایشوز

پانچ خواتین کی نعشیں کہاں کہاں سے برآمد ہوئیں اور یہ کس حالت میں تھیں؟ روح کو ٹرپا کررکھ دینے والا سچ سامنے آگیا‘ ملک بھر کی خواتین میں تشویش کی لہر دوڑ گئی

دو ماہ قبل ظفر علی روڈ کے قریب نالے سے جواں سالہ لڑکی کی نعش برآمد ہوئی، گزشتہ ماہ گرین ٹان سے بائیس سالہ لڑکی کی بوری بند تشدد زدہ نعش ملی

پانچ خواتین کی نعشیں کہاں کہاں سے برآمد ہوئیں اور یہ کس حالت میں تھیں؟ روح کو ٹرپا کررکھ دینے والا سچ سامنے آگیا‘ ملک بھر کی خواتین میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق غیرت کے نام پر قتل، یا پھر معاملہ کچھ اور؟ رواں سال قتل ہونے والی پانچ نامعلوم خواتین کی نعشیں لاہور کی مختلف ویران جگہوں سے ملیں، پانچ خواتین کا قاتل کون، پولیس سراغ نہ لگا سکی۔ ذرائع کے مطابق دو ماہ قبل ظفر علی روڈ کے قریب نالے سے جواں سالہ لڑکی کی نعش برآمد ہوئی، گزشتہ ماہ گرین ٹان سے بائیس سالہ لڑکی کی بوری بند تشدد زدہ نعش ملی، کاہنہ کے علاقے میں جوان لڑکی کو بری طرح تشدد کر کے نعش کھیتوں میں پھینک دی گئی، مقتولہ کے سر پر گہری ضرب لگنے سے خون میں لت پت تھی۔

غازی آباد کے علاقے میں خاتون کو قتل کر کے نعش پلاٹ میں پھینک دی گئی، جبکہ دو روز قبل مغلپورہ کے علاقے میں اٹھائیس سالہ لڑکی کو فائرنگ کر کے قتل کردیا گیا، تاحال مقتولین کی شناخت نہیں ہوسکی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ خواتین کی شناخت ہونے پر مزید حقائق واضح ہوں گے۔ دوسری جانب گزشتہ روز تھانہ گلشن راوی کی حدود میں پلازے سے شہری کی نعش برآمد ہوئی، پولیس نے نعش پوسٹمارٹم کے لیے مردہ خانے منتقل کر کے کارروائی شروع کردی۔پولیس کا کہنا تھا کہ متوفی کی شناخت 42 سالہ غلام علی کے نام سے ہوئی ہے، متوفی کے جسم پر کسی قسم کے تشدد کے نشانات نہیں پائے گئے، نعش کو پوسٹمارٹم کے لیے مردہ خانے منتقل کر دیا گیا، موت کی وجوہات کا تعین پوسٹمارٹم رپورٹ میں کیا جائے گا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button