کھیل

پی سی بی میں بھی دوہری شہریت کی گونج

حکومت میں دوہری شہریت کےمعاملےپرہونے والی تنقید کےبعد پاکستان کرکٹ بورڈ بھی دبائوکا شکارہے

حکومت میں دوہری شہریت کےمعاملےپرہونے والی تنقید کےبعد پاکستان کرکٹ بورڈ بھی دبائوکا شکارہےجہاں پی سی بی کے چیف ایگزیکٹیو آفیسروسیم خان سمیت نصف درجن سےزائد افسران دوہری شہریت رکھتےہیں۔ ان حالات میں پی سی بی کے چیئرمین احسان مانی نے گورننگ بورڈ کا ہنگامی اجلاس جمعرات کی شام ویڈیو لنک پر طلب کر لیاہے۔  پی سی بی ترجمان اجلاس کو غیر رسمی قرار دے رہے ہیں لیکن ذرائع کا کہنا ہے کہ دوہری شہریت کے معاملے پر پی سی بی حکام بورڈ آف گورنرز کو اعتماد میں لیں گے۔ پی سی بی حکام اراکین سے رابطہ کررہے ہیں۔  پی سی بی کا کہنا ہے کہ یہ غیر رسمی اجلاس ہے جس میں اراکین کوڈومیسٹک کرکٹ اور کلب کرکٹ کی رجسٹریشن پر بریف کیا جائے گا۔ پی سی بی خود مختار ادارہ ہے اس کے آئین میں دوہری شہریت کے حوالے سے آئین کی کسی شق میں اطلاق نہیں ہوتا اور منظور شدہ آئین کے مطابق چلتا ہے۔

ذمہ دار ذرائع کا کہنا ہے کہ پی سی بی کے چیئرمین احسان مانی کے پاس بر طانیہ کی ریزیڈنسی ہے۔ چیف ایگزیکٹیو وسیم خان، ڈائریکٹرز ندیم خان، قومی ہائی پرفارمنس میں کام کرنے والے ثقلین مشتاق، پاکستانی ٹیم کے بولنگ کوچ وقار یونس دوہری شہریت رکھتے ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اس سال پی سی بی بورڈ آف گورنرز کے دو اجلاس ہوچکے ہیں۔ جمعرات کا اجلاس ایسے وقت میں بلایا جارہا ہے جب احسان مانی اور وسیم خان تعطیلات گزارنے برطانیہ میں اپنے اپنے گھروں میں ہیں۔ وفاقی سطح پر دوہری شہریت کے بعد بورڈ کے اہم افسران کی دوہری شہریت پر بھی سوالات اٹھ رہے ہیں ۔

ہنگامی اجلاس میں چیئرمین اس حوالے سے بھی اہم فیصلے کرسکتے ہیں۔  پی سی بی ترجمان کا کہنا ہے کہ اجلاس میں دوہری شہریت کا معاملہ زیر بحث نہیں آئے گا کیوں کہ پی سی بی کا آئین دوہری شہریت کے حوالے سے خاموش ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ پی سی بی میں کئی افسران نےابھی تک اپنی دہری شہریت کو چھپایا ہوا ہےاس کی وجہ پی سی بی کا آئین ہے ۔

Tags
Back to top button
Close