کھیل

امریکا اور بھارت سے شکست پر پاکستانی ٹیم کیخلاف بغاوت کے مقدمہ کی درخواست

ٹیم مینیجر، کوچ اور چیف سلیکٹر کے خلاف بھی مقدمہ درج کرنے کی استدعا کی گئی ہے۔عدالت نے اندراج مقدمہ کی درخواست پر پولیس سے رپورٹ طلب کر لی

لاہور(سپورٹس ڈیسک)آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ میں امریکا اور بھارت سیکرکٹ میچ ہارنے پر عدالت میں پٹیشن دائرکر دی گئی۔رٹ پٹیشن ایک وکیل کی جانب سے ایڈیشنل سیشن جج گوجرانوالہ تمثال زیب نعیم کی عدالت میں دائر کی گئی ہے۔درخواست کے مطابق کپتان بابر اعظم اور دیگر ٹیم اراکین کے خلاف بغاوت کا مقدمہ درج کیا جائے۔

اس کے علاوہ ٹیم مینیجر، کوچ اور چیف سلیکٹر کے خلاف بھی مقدمہ درج کرنے کی استدعا کی گئی ہے۔عدالت نے اندراج مقدمہ کی درخواست پر پولیس سے رپورٹ طلب کر لی ہے اور ایس ایچ او تھانہ اروپ کو 21 جون تک رپورٹ جمع کرانے کی ہدایت کی گئی ہے۔
واضح رہے کہ آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ امریکا میں جاری ہے جس میں پاکستان کو امریکا اور بھارت نے شکست دی تھی۔پاکستان کو امریکا کے ہاتھوں سپر اوور میں 5 رنز سے شکست ہوئی جب کہ بھارت پاکستان سے 6 رنز سے جیتا۔آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ میں بھارت کے خلاف 120 رنز کا ہدف حاصل نہ کرنے پر پاکستانی کھلاڑی بالخصوص بلے باز شدید تنقید کی زد میں ہیں۔

سابق ٹیسٹ کرکٹر احمد شہزاد نے کہا کہ جب بھی کسی بڑی ٹیم سے مقابلہ ہو اور پریشر بڑھے تو بابر اعظم اور محمد رضوان اسی طرح آؤٹ ہو جاتے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ ہم نے کسی نئے آنے والے کھلاڑی کی تربیت نہیں کی، دنیا میں نئے آنے والوں کو تیار کیا جاتا ہے لیکن یہاں پر نئے آنے والوں کو ڈھال بنا کر استعمال کیا گیا، اعظم خان اور صائم ایوب کے خلاف مہم چلائی گئی، اپنا سارا ملبہ ان پر ڈالا جس کے بعد عوام ان پر تنقید کرتی ہے۔
سابق ٹیسٹ کرکٹر نے بابر اعظم اور محمد رضوان پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ دونوں کھلاڑیوں نے گزشتہ چار سے پانچ برسوں میں سوشل میڈیا پر پیسہ لگا کر اپنے قد اوپر کئے اور لوگوں کی آنکھوں میں دھول جھونکی۔انہوں نے مزید کہا کہ اپنی مرضی سے ان لوگوں نے پیسے بڑھوائے، پھر اپنی گیم اور اسٹرائیک ریٹ بہتر کرنے کے بجائے ان لوگوں نے یہ پیسہ سوشل میڈیا پر لگا دیا۔احمد شہزاد نے کہا ا اس قسم کی کارکردگی کے بعد آپ لوگ ایجنٹ سے کہہ کر سوشل میڈیا پر پوسٹ لگوا رہے ہوتے ہیں کہ رضوان سو نہیں سکے اور بابر اعظم کھانا نہیں کھا رہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button