ٹیکنا لوجی

آنکھ دیکھ کرخون کی کمی بتانے والی ایپ

بہت جلد ایک ایپ کےذریعے ہی اس کیفیت کو معلوم کیا جاسکےگاجسےعام طورپرخون کی کمی کہا جاتا ہے

اب خون میں ہیموگلوبِن کی کمی کےلیےٹیسٹ کی ضرورت نہیں رہے گی اوربہت جلد ایک ایپ کےذریعے ہی اس کیفیت کومعلوم کیا جاسکے گا جسےعام طورپرخون کی کمی کہا جاتا ہے۔ طبی عملےکوصرف اتنا کرنا ہوگا کہ ایپ کوکھول کراسمارٹ فون کےکیمرے کوآن کرنا ہوگا۔ اس کےبعد آنکھ کے نچلے پپوٹے کواس طرح موڑا جائے کہ اندرونی سطح نمایاں ہوجائے۔ اس کی تصویر لینے کے بعد یہ ایک بڑے ڈیٹا بیس میں چلی جاتی ہے جہاں الگورتھم مریض میں خون کی کمی کی شدت کا اندازہ لگاسکتی ہے۔ اگرچہ عین اسی عمل کودیکھتے ہوئےماہر ڈاکٹر بھی آنکھوں کی سرخی سےخون میں کمی کا اندازہ لگاسکتے ہیں لیکن کئی مرتبہ ڈاکٹروں سےبھی غلطی ہوجاتی ہے۔ یہاں یہ ایپ بہت مفید ثابت ہوسکتی ہےاوراس سےعام طبی عملہ بھی بہترفیصلہ کرسکتا ہے۔

ہیموگلوبن نامی پروٹین کی کمی بیشی ہی خون کی کمی اورزیادتی کو ظاہرکرتی ہےاوراس ضمن میں سافٹ ویئرڈاکٹروں کواضافی مدد فراہم کرسکتا ہے۔ اب اسے ایک مختصرایپ میں سموکرآزمائش کی جارہی ہے جس کے بعد ایپ کا حتمی ورژن پیش کیا جائے گا۔ اسے پوردوا یونیورسٹی کے پروفیسر ینگ کِم اور ان کی ٹیم نے بنایا ہے۔ لیکن ان کا اعتراف ہے کہ یہ روایتی ٹیسٹ کی جگہ نہیں لے سکتی۔ لیکن یہ کسی تکلیف کے بغیر فوری طور پر ہیموگلوبن کے شمار کو ظاہر ضرور کرسکتی ہے۔ اس سے پہلے ہی خون کی کمی کے شکار مریض کو بار بار خون دینے کی ضرورت بھی ختم یا کم ہوجائے گی۔

اس ٹیکنالوجی میں اسپیٹرواسکوپِک انداز میں آنکھ کا تجزیہ کیا جاتا ہے جس میں ہیموگلوبن کے اندرمرئی روشنی کے جذب ہونے کی شرح کی بنیاد پر تتیجہ نکالا جاتا ہے۔ اس کے بعد سافٹ ویئراندازہ لگا کربتاتا ہے کہ خون کی کمی اس وقت کس درجے پرہے۔اس کی پشت پر موجود دو الگورتھم ہیں ایک توکیمرے کی تصویرکوبہت بلند معیارکی بنا کراس کی تفصیلات واضح کرتا ہے اوردوسرا الگورتھم حساب کتاب لگا کرہیموگلوبِن کا شمارظاہرکرتا ہے۔

ایپ کو کینیا کے 153 مریضوں پرآزمایا گیا ہے۔ اس میں روایتی ٹیسٹ کے ساتھ ساتھ ایپ کو بھی استعمال کیا گیا توبہت اچھے نتائج برآمد ہوئے۔ دوسری جانب اسی ایپ کوخون کے سرطان میں مبتلا افراد میں ہیموگلوبن شمارکرنے کے لیے بھی کامیابی سے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ اچھی بات یہ ہے اس کے لیے کسی اضافی آلے یا ہارڈویئرکی ضرورت نہیں رہتی۔

Tags
Back to top button
Close