ٹیکنا لوجی

کمپنی نےرواں سال کا سب بڑا فیچرمتعارف کرادیا

کمپنی نےرواں سال کا ایک بڑا فیچرمتعارف کرادیا ہےجس پرکافی عرصےسےکام ہورہا تھا

کمپنی نےرواں سال کا ایک بڑا فیچرمتعارف کرادیا ہےجس پرکافی عرصےسےکام ہورہا تھا اوریہ دنیا کی مقبول ترین مسیجنگ اپلیکشن میں پہلی بارپیش کیا جارہا ہے۔ یہ فیچراسنیپ چیٹ میں موجود فیچرسےملتا جلتا ہےجسےبعد میں انسٹاگرام نےبھی کاپی کرلیا تھا،واٹس ایپ میں بھی اس فیچرکےتحت میسجزایک مخصوص وقت پرغائب ہوجائیں گے۔ یہ بتانےکی ضرورت نہیں کہ اس وقت واٹس ایپ پیغامات فون پرمیں ہمیشہ موجود رہتےہیں (اگران کوخود صاف نہ کیا جائے)، جوپیاروں کی یادوں کواپنےپاس رکھنےکا اچھا ذریعہ ہے،مگربیشترمواد کوہمیشہ رکھنےکی ضرورت نہیں ہوتی۔ یہی وجہ ہےکہ واٹس ایپ کی جانب سےیہ نیا فیچرمتعارف کرایا گیا ہےجسےڈی اپیئرنگ میسجزکا نام دیا گیا ہے۔ جب اس فیچرکوٹرن آن کیا جائےگا توکسی چیٹ میں نئےپیغامات 7 دن بعد خودبخود غائب ہوجائیں گے۔

کمپنی کےمطابق اس سےبات چیت زیادہ پرائیویٹ محسوس ہوگی،خاص طورپرانفرادی چیٹ میں،گروپس میں یہ کنٹرول ایڈمن کےپاس ہوگا۔ اسنیپ چیٹ اوردیگرایپس میں اس طرح کےفیچرمیں پیغامات فوری طورپراس وقت غائب ہوجاتےہیں،جب انہیں ایک باردیکھ لیا جاتا ہے۔ مگر واٹس ایپ پہلی ایسی اپلیکشن ہےجس میں پورا ایک ہفتےکا وقت دیا جارہا ہے۔ تاہم فیس بک کی زیرملکیت کمپنی کا کہنا تھا کہ وہ اس فیچرپر نظررکھےگی اوربتدریج اس دورانیےکوایڈجسٹ کیا جائےگا۔ یہ فیچراسی وقت استعمال کیا جاسکےگا جب اسےسیٹنگزمیں جاکرٹرن آن کیا جائےگا اورماضی کےپیغامات پراس کا اطلاق نہیں ہوگا۔ اس مقصد کےلیےواٹس ایپ کواوپن کرکےکانٹیکٹ نام کو دبا کررکھیں توڈی اپیئرنگ میسجزکا آپشن آجاتا ہے،جہاں اس کوٹرن آن کیا جاسکتا ہے۔

واٹس ایپ کےترجمان کےمطابق ہم نے 7 دن سےاس لیےآغازکیا ہےکیونکہ ہمارے خیال میں اس سےلوگوں کواس خیال سےمطابقت پیدا کرنے کا وقت ملےگا کہ اب میسجزمستقل نہیں۔ اس فیچرمیں صرف تحریری پیغامات نہیں بلکہ تصاویراورویڈیوزبھی 7 دن بعد غائب ہوجائیں گی، ایسا بھیجنےاورموصول کرنےوالےکےساتھ ہوگا،تاہم اسکرین شاٹ یا میسجزکوکاپی کرنا ممکن ہوگا۔ کمپنی کا کہنا ہےکہ یہ فیچر 5 نومبرسے متعارف کرانےکا سلسلہ شروع ہوگیا ہےاوررواں ماہ کےدوران تمام صارفین کودستیاب ہوگا۔ واٹس ایپ میں اس فیچرپرگزشتہ سال سےکام ہورہا تھا۔ گزشتہ سال جب یہ بیٹا ورژن میں نظرآیا تھا تواس وقت یہ صرف گروپ چیٹ میں دستیاب تھا اوراس میں پیغام 5 سیکنڈ یا ایک گھنٹےبعد ڈیلیٹ ہوجاتا۔ ٹیلیگرام نےیہ فیچراپنی ایپ میں پہلےہی متعارف کرا دیا ہےاوراب فیس بک اسےاپنی مقبول ترین میسجنگ ایپ میں اسےپیش کرنےوالی ہے۔ ٹیلیگرام میں اس طرح کےفیچرمیں جو پیغامات بھیجےجاتےہیں،وہ دیگرصارفین فارورڈ نہیں کرسکتےاورنہ ہی اس کا اسکرین شاٹ بھی نہیں لےسکتے۔

Back to top button