ٹیکنا لوجی

بچوں کی جانب سے ٹک ٹاک پر ناقابل یقین حملہ کردیا گیا

بچوں کا ڈیٹا جمع اوراستعمال کرنےپربرطانیہ میں ٹک ٹاک پراربوں ڈالرکا دعویٰ دائرکردیا گیا

بچوں کی جانب سے ٹک ٹاک پر ناقابل یقین حملہ کردیا گیا،میڈیا رپورٹس کے مطابق بچوں کا ڈیٹا جمع اوراستعمال کرنےپربرطانیہ میں ٹک ٹاک پراربوں ڈالرکا دعویٰ دائرکردیا گیا۔ انگلینڈ میں بچوں کی سابق کمشنرنےبرطانیہ اوریورپ کےان لاکھوں بچوں کی جانب سےیہ دعویٰ دائر کیا ہےجنہوں نےٹک ٹاک کا استعمال کیا۔ بی بی سی کےمطابق اگریہ دعویٰ کامیاب ہوجاتا ہےکہ ہرمتاثربچےکوہزاروں ڈالرہرجانہ ملےگا۔ دوسری جانب ٹک ٹاک کاکہنا ہےکہ یہ مقدمہ میرٹ پرنہیں ہےاوروہ اس کا سامنا کرے گا۔ رپورٹ کےمطابق وکلاء یہ الزام عائد کریں گےکہ ‘ٹک ٹاک وارننگ،شفافیت اورقانونی طورپردرکاررضامندی کےبغیربچوں کی معلومات مثلاً فون نمبر،ویڈیوز،لوکیشن،بائیومیٹرک ڈیٹا جمع کرتا ہےاوربچوں یا والدین کواس کی خبربھی نہیں کہ اس معلومات کےساتھ کیا کیا جارہا ہے۔’

اس مقدمےکےجواب میں ٹک ٹاک کا کہنا ہےکہ پرائیویسی اورسیفٹی اس کی ترجیحات میں شامل ہیں اورتمام صارفین،بالخصوص نوجوان صارفین کےڈیٹا کومحفوظ رکھنےکےلیےاس کے پاس بہترین پالیسیز،پروسسزاورٹیکنالوجی موجود ہے۔ یاد رہےکہ ٹک ٹاک کےدنیا بھرمیں صارفین کی تعداد 80 کروڑسےزائد ہےاورگزشتہ برس اس کی مالک کمپنی بائٹ ڈانس نےایڈورٹائزنگ کی مد میں اربوں ڈالرکا منافع کمایا۔ بی بی سی کےمطابق یہ دعویٰ 25 مئی 2018 کےبعد ٹک ٹاک استعمال کرنے والے (قطع نظر کہ ان کا اکاؤنٹ یا پرائیویسی سیٹنگز ہیں یا نہیں) تمام بچوں کی جانب سے دائر کیا جارہا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads. because we hate them too.